مصنوعی ذہانت میں محمد بن زاید یونیورسٹی کا قیام عالمی مستقبل کیلئے بہت اہم ہے : تانمای باکشی


نورسلمان سے ابوظہبی ، 21 اکتوبر ، 2019 (وام) ۔۔ دنیا کے سب سے کم عمر آئی بی ایم واٹسن ڈویلپر نے کہاہےکہ متحدہ عرب امارات کی طرف سے مصنوعی ذہانت میں محمد بن زاید یونیورسٹی کا قیام یقیننا انتہائی اہم پیشرفت ہے – مصنوعی ذہانت میں کینیڈا کے اس ماہر تانمای باکشی نے امارات نیوز ایجنسی " وام " سے گفتگو میں بتایا کہ ایسی جامعہ کا قیام بہت اہم معاملہ ہونے کے ساتھ عرب امارات کی طرف سے اسے انجام دینا بہت قابل فخر بھی ہے – ابوظہبی میں قائم ہونے والی گریجویٹ سطح کی یہ ایم بی زیڈ یو اے آئی ایک ایسا تحقیقی ادارہ ہوگا جو مصنوعی ذہانت کے شعبے میں مقامی اور غیرملکی طلبہ کیلئے ماہرانہ ڈگری پروگرام متعارف کرائے گا – باکشی نے اس کی اہمیت کو بیان کرتے ہوئے کہاکہ امریکہ ، کینیڈا جیسے ممالک تعلیم کی وجہ سے آج دنیا بھر میں ہاٹ سپاٹ سمجھے جاتے ہیں ، ایسے میں عرب امارات میں ایسی جامعہ کا قیام نہ صرف عرب خطہ بلکہ پوری دنیا کیلئے اہم ہوگا ۔ یہ عرب امارات حکومت کی طرف سے مستقبل کیلئے تیاری کا اقدام ہے ، عرب امارات نے اس تناظر میں مصنوعی ذہانت کی حکمت عملی 2031 جاری کررکھی ہے ، جس کا مقصد دنیا کی تمام اقوام میں جدید ترین ہونے کا مقام حاصل کرنا ہے – اس پندرہ سالہ نوجوان ماہر نے کہاکہ آج جو ملک مصنوعی ذہانت میں سرمایہ کاری نہیں کرے گا وہ آنے والے کل میں پیچھے رہ جائے گا ، ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم مستقبل کیلئے خود کو تیار کرنے کی خاطر آج موثر اقدام کریں – دنیا بھر سے 30 اقوام کی 500 کمپنیوں سے کئے گئے سروے " 2019 کے پی ایم جی " کے نتائج میں بتایا گیا ہے کہ دنیا کے اکثر ادارے آئیندہ تین برس میں مصنوعی ذہانت میں مہارت اور اس سے متعلقہ انفراسٹرکچر میں سرمایہ کاری کو 50 سے 100 فیصد بڑھا دیں گے ۔ باکشی نے کہاکہ خودکار ڈرائیونگ والی گاڑیوں ، ذاتی معاونت ، سفارشات ، کینسر کی تشخیص ، بیماریوں سے محفوظ صحت اور اس جیسے کئی دیگر شعبوں میں ایپلکیشنز کو بڑے پیمانے پر تخلیق کی ضرورت درکار ہے ، مصنوعی ذہانت اس جانب پہلا قدم ہے ۔ انہوں نے اس شعبے میں عرب امارات کی پیشرفت کو بہت موثر قرار دیتے ہوئے کہاکہ اس میں نوجوانوں کو آگے لانے کیلئے اہم اقدام کئے گئے ہیں – انہوں نے مصنوعی ذہانت کے شعبے میں نوجوانوں کی صلاحیتوں پر زیادہ سے زیادہ انحصار رکھنے پر زور دیا اور کہاکہ ایسے نوجوانوں کو خود سے آگے پیشرفت کرنے کا موقع فراہم کیا جانا چاہیئے – مصنوعی ذہانت کی محمد بن زاید یونیورسٹی سے ایم ایس سی اور پی ایچ ڈی پروگرامز کا بھی اجراء ہوگا جوکہ انتہائی جدید ماحول میں طلباء کی ضروریات کو پورا کرے گی – ترجمہ ۔ تنویر ملک – http://wam.ae/en/details/1395302796273

WAM/Urdu