اتوار 29 مئی 2022 - 11:41:27 صبح

صدراردگان کےدورہ متحد ہ عرب امارات کےدوران نئےمعاہدوں پردستخط ہونگے:سپیکر ترک پارلیمنٹ

  • 145376082536844096
  • 2687754725972254942

تحریر:ابراہیم شکراللہ ابوظبی، 21 جنوری،2022 (وام)۔۔ متحدہ عرب امارات اور ترکی فروری میں ترک صدر رجب طیب اردوان کے دورہ متحدہ عرب امارات کے دوران نئے معاہدوں پر دستخط کرکے گزشتہ وعدوں کی تجدید کریں گے۔ ترکی کی گرینڈ نیشنل اسمبلی کے سپیکر مصطفیٰ سینتوپ نے جمعہ کے روز امارات نیوز ایجنسی (وام) کو ایک خصوصی انٹرویو میں بتایا کہ انکے صدر کے دورہ متحدہ عرب امارات کی تصدیق ہوگئی ہے اور اسکی تیاریاں جاری ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ دورہ دونوں ممالک کے درمیان بہتر تعلقات کا پیش خیمہ ثابت ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں یقین ہے کہ ترکی اور متحدہ عرب امارات کے رہنما ایک دوسرے کے شانہ بشانہ کھڑے ہو کر اپنے طور پر ایک اہم پیغام دیں گے کہ ہمارا مقصد دو طرفہ تعلقات کو مزید مضبوط بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے موجودہ تعاون میں وسعت کے لیے نئے معاہدوں کو انجام دینے اور سابقہ ​​وعدوں کی تجدید کی ضرورت ہے۔ ترک پارلیمنٹ کے سپیکر نے ابوظبی میں اپنے اماراتی ہم منصب فیڈرل نیشنل کونسل (ایف این سی) کے سپیکر صقرغوباش سے ملاقات کی اوردونوں ممالک کے درمیان پارلیمانی تعلقات کو فروغ دینے پر تبادلہ خیال کیا۔ سینتوپ کا دورہ ابوظبی کے ولی عہد اور متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے ڈپٹی سپریم کمانڈر عزت مآب شیخ محمد بن زاید آل نھیان کی انقرہ میں صدر رجب طیب اردگان سے ملاقات کے دو ماہ بعد ہوا ہے۔ شیخ محمد کے دورے کے دوران متحدہ عرب امارات نے ترکی میں 10 ارب ڈالر کا سرمایہ کاری فنڈ قائم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ مصطفیٰ سینتوپ نے کہا کہ شیخ محمد بن زاید کا دورہ ترکی ہمارے تعلقات کو ایک نئی سطح پر لے جانے کے لیے ایک اہم قدم تھا۔ اس دورے کے دوران اہم معاملات پر تعاون کے معاہدوں پر دستخط کیے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد صحت، زراعت، لاجسٹکس، انفراسٹرکچر، فنانس اور سیاحت کے علاوہ موسمیاتی تبدیلی، توانائی، پانی اور تحفظ خوراک کے شعبوں میں ترکی اور متحدہ عرب امارات کے درمیان تعاون کو مضبوط بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ دونوں فریق مزید سرمایہ کاری اور تعاون کے لیے نئے اہداف مقرر کرنے کے لیے تیار ہیں۔ مصطفیٰ سینتوپ نے کہا کہ ترکی متحدہ عرب امارات کے ساتھ تعاون کو بہت اہمیت دیتا ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ ہمارے تعلقات کو مضبوط بنانے سے نہ صرف ہمارے باہمی مفادات بلکہ خطے کی خوشحالی اور استحکام میں بھی مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ متحدہ عرب امارات میں ہمارے ہم منصب علاقائی استحکام اور امن کے لیے مل کر کردار ادا کرنے کے معاملے میں یکساں نظریہ رکھتے ہیں۔ متحدہ عرب امارات خلیج تعاون کونسل کے ممالک میں ترکی کا سب سے بڑا تجارتی پارٹنر ہے۔ 2020 میں دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تجارت 8 ارب ڈالر تک پہنچ گئی تھی۔ انہوں نے بتایا کہ 2021 کے پہلے 10 مہینوں میں تجارت 6.4 ارب ڈالر تھی۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات ترکی میں ایک اہم سرمایہ کار بھی ہے اور GCC ممالک میں دوسرے نمبر پر ہے۔انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات نے سیاحت اور بینکنگ کے ساتھ ساتھ بندرگاہوں اور خوردہ کاروبار میں بھی "اہم سرمایہ کاری" کررکھی ہے۔ گزشتہ ہفتے بلومبرگ کے ساتھ ایک انٹرویو میں متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے خارجہ تجارت ثانی الزیودی نے کہا کہ ان کا ملک باقی دنیا کے ساتھ اپنے لاجسٹک تعلقات کا فائدہ اٹھاتے ہوئے ترکی کے ساتھ اپنے تجارتی حجم کو دوگنا یا تین گنا کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ مصطفیٰ سینتوپ کا خیال ہے کہ دو طرفہ تجارت کا موجودہ حجم ابھی تک اپنی پوری صلاحیت سے بہت دور ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ترک کمپنیاں اب تک متحدہ عرب امارات میں 13 ارب ڈالر کے 141 منصوبے شروع کرچکی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ہماری کمپنیاں 10 سال سے متحدہ عرب امارات کی مارکیٹ میں سرمایہ کاری کر رہی ہیں اور اس کا حصہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں ترکی کی سرمایہ کاری کی حجم 720 ملین ڈالر ہے۔ انہوں نے کہا کہ آنے والے سالوں میں ہم لاجسٹکس، فنانس، قابل تجدید توانائی اور انفراسٹرکچر کے شعبوں میں متحدہ عرب امارات میں اپنی سرمایہ کاری کو بڑھانا چاہتے ہیں۔ دونوں ممالک کے درمیان تازہ ترین معاہدے پر بدھ کو دستخط کیے گئے۔ ترکی اور اماراتی مرکزی بینکوں نے مقامی کرنسیوں میں تقریباً 5 ارب ڈالر کے تبادلے کے معاہدے پر اتفاق کیا تھا۔ ترک پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا کہ ابوظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید کے دورہ ترکی اور صدر رجب طیب اردوان کے فروری میں دورہ متحدہ عرب امارات سےدوطرفہ تعلقات کو مزید فروگ ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ اس دورے سے دونوں ممالک کے اقتصادی تعلقات میں بھی اضافہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ان دوروں کے دوران طے پانے والے معاہدوں کے ساتھ آنے والے عرصے میں ہمارے ممالک کے درمیان باہمی سرمایہ کاری میں تیزی سے اضافہ ہوگا۔ ترجمہ: ریاض خان ۔ https://wam.ae/en/details/1395303013478

WAM/Urdu