بدھ 12 مئی 2021 - 1:17:07 شام

چین اور متحدہ عرب امارات عالمی آمدورفت آسان بنانے کیلئے سستی ویکسین کی تیاری میں تعاون کریں گے: چینی وزیرخارجہ


تحریر: بِنسال عبد القادر ابوظبی، 27 مارچ، 2021 (وام) ۔۔ چینی وزیرخارجہ وانگ یی نے امارات نیوز ایجنسی (وام ) کو بتایا ہےکہ چین متحدہ عرب امارات کے ساتھ COVID-19 سے بچاؤ کی ویکسین کی مشترکہ تیاری تیز کرکے سب کیلئےقابل رسائی بنانے کے لئے کام کرنے کا خواہاں ہے۔ وام کو ایک خصوصی انٹرویو میں چینی وزیر خارجہ نے کہا کہ ان مشترکہ کوششوں میں مشرق وسطیٰ اور افریقی ممالک کے ساتھ اس وباء کیخلاف کثیرالجہتی تعاون کو فروغ دینے اور لوگوں کی آمدورفت آسان بنانے کے لئے ایک بین الاقوامی میکانزم کا قیام بھی عمل میں لایا جاسکتا ہے۔ وانگ یی علاقائی دورے کے تحت دو روزہ سرکاری دورے پر ہفتہ کی شام ایران سے ابوظبی پہنچے تھے۔ اس دورے کے دوران وہ اعلیٰ اماراتی حکام سے ملاقاتیں کررہے ہیں۔ ویکسین کی مشترکہ تیاری میں تیزی لانا چینی وزیرخارجہ نے کہا کہ چین دونوں ملکوں کے مابین تعاون کو جاری رکھنے کے لئے متحدہ عرب امارات کے ساتھ مل کر کام کرنے کو یقینی بنارہا ہے۔ پہلے ہم اس ویکسین کی دوطرفہ تیاری کو تیز کرنے کے لئے کام کریں گے جس سے اس ویکسین کی سب کو سستی دستیابی یقینی بنانے میں بہت حد تک مدد مل سکے گی۔ انھوں نے کہا کہ چین اور متحدہ عرب امارات کے مابین تعاون ایک نئے مرحلے میں داخل ہوچکا ہے کیونکہ دونوں ملک دنیا میں COVID-19 سے بچاؤ کی ویکسین کے تیسرے مرحلے کے کلینیکل ٹرائلز منعقد کرانے میں کامیاب ہوئے۔ متحدہ عرب امارات 23 جون 2020 کو اس ویکسین کے تجربات شروع کرنے کے بعد 9 دسمبر 2020 کو چینی ساختہ سینوفرم ویکسین کی منظوری دینے والا دنیا کا پہلا ملک تھا۔ انہوں نے کہا کہ ان کوششوں سے نہ صرف چینی اور متحدہ عرب امارات کے لوگوں کو فائدہ پہنچا بلکہ پوری دنیا کو اس وبائی مرض کے خلاف لڑنے میں مدد ملی ۔ انھوں نے کہا کہ COVID-19 وباء کے دوران متحدہ عرب امارات اور چین کے درمیان تعاون دونوں ممالک کے مابین گہرے اعتماد کی علامت ہے۔ کثیرالجہتی تعاون اور بین الاقوامی سفری طریقہ کار متحدہ عرب امارات کے ساتھ تعاون کے دوسرے پہلو کے بارے میں بات کرتے ہوئے چینی وزیر خارجہ نے کہا کہ جب ویکسین کی بات آتی ہے تو ہم وبائی مرض سے لڑنے کے لئے کثیر الجہتی تعاون کو فروغ دینے اور خاص طور پر مشرق وسطیٰ اور افریقی ممالک کے ساتھ مل کر کام کرنے کی کوشش کریں گے۔ وانگ یی نے کہا کہ تیسرے حصے میں ہم ویکسی نیشن سرٹیفکیٹ کا تبادلہ کرنے کے لئے ایک بین الاقوامی طریقہ کار کے قیام کے لئے مل کر کام کریں گے جس سے لوگوں کے سفر کو آسانی سے وائرس پر قابو پانے کے احتیاطی اقدامات کے حصول کے لئے بنایا جا سکے گا۔ متحدہ عرب امارات کی علامتی یکجہتی نے چینیوں کے دلوں کو چھو لیا چینی وزیر نے زور دیا کہ ہمیں یقین ہے کہ چین اور متحدہ عرب امارات کے مابین دوطرفہ کوششوں کی وجہ سے وبائی بیماری سے لڑنے کے زیادہ سے زیادہ بہتر نتائج برآمد ہوں گے جس کے نتیجے میں بین الاقوامی کوششوں کو بھی تقویت ملے گی۔ انھوں نے وباء کے دوران متحدہ عرب امارات کے چین کے ساتھ یکجہتی کے اقدامات کو سراہا۔ انھوں نے کہا کہ برج خلیفہ پر "مضبوط رہو ووہان" جیسے حوصلہ افزا جملے روشن کئے گئے۔ اسی طرح 4 اپریل 2020 کو کویڈ کے متاثرین کیلئےچین کے قومی سوگ کے دن پر شیخ محمد بن زاید نے اپنے سرکاری ٹویٹر اکاؤنٹ سے چینی، انگریزی اور عربی زبان میں اس وباء کے دوران انتقال کرنے والے چینی شہداء اور متاثرین کے لئے تعزیت کا اظہار کیا تھاجس سے چینی عوام بہت متاثر ہوئے۔ دو ممالک کے مابین زبردست ہم آہنگی چینی وزیر خارجہ نے کہا کہ اس دورے کے دوران وہ اماراتی حکام سے ملاقات کر کے دونوں ممالک کے مابین زبردست ہم آہنگی پر تبادلہ خیال کریں گے۔ ہم چین کی ترقیاتی مساوات قائم کرنے کی کوششوں اور متحدہ عرب امارات کی آئندہ 50 سال کی ترقیاتی حکمت عملی کے مابین ایک ایسا توازن پیدا کرنے کی کوشش کریں گے جس سے دوطرفہ فوائد اور مفادات پر مبنی تعاون کو تقویت ملے گی۔ انھوں نے کہا کہ ہم مشرق وسطیٰ اور خلیج میں امن و استحکام کے تحفظ کے لئے متحدہ عرب امارات کے ساتھ رابطے اور تعاون کو بھی فروغ دیں گے۔ انکا کہنا تھا کہ ہم علاقائی امور میں متحدہ عرب امارات کے موثر اور تعمیری کردار کا خیرمقدم کرتے ہیں۔ چینی وزیر خارجہ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات چین میں ایک معروف ملک ہے اور چینی روایات، رواداری، بقائے باہمی اور کشادگی کو برقرار رکھتے ہوئے اس ملک نے اپنے آپ کو جس طرح جدید بنایا ہے وہ قابل تعریف ہے۔ متحدہ عرب امارات مشرق وسطیٰ، خلیج عرب اور مسلم دنیا میں چین کا قریبی دوست ہے۔ یہ بین الاقوامی امور پر رابطوں اور تعاون میں بھی چین کا اچھا دوست ہے۔ انھوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے مابین دوطرفہ تعلقات مضبوط تر ہوتے جارہے ہیں۔ تخلیقی صلاحیتوں اور عملی رجحان پر مرکوز تعلقات وانگ یی نے کہا کہ چین کے صدر شی جن پنگ اور ابو ظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید آل نھیان کے مابین کامیاب دوروں اور ملاقاتوں سے ٹھوس سیاسی اعتماد کی عکاسی ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے اہم قومی مفادات کے لئے مستقل دو طرفہ حمایت نیز مشکل اوقات کے دوران دکھائی جانے والی یکجہتی نے ایک جامع اسٹریٹجک شراکت داری کا ثبوت دیا ہے۔ چینی وزیر خارجہ نے کہا کہ چین اور متحدہ عرب امارات کے مابین تعاون ہمیشہ تخلیقی صلاحیتوں اور عملی رجحان کے بارے میں رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہم COVID-19 سے بچاؤ کی ویکسین، روایتی توانائی، معیشت، تجارت، سرمایہ کاری، G5، بگ ڈیٹا، مصنوعی ذہانت اور دیگر ہائی ٹیک ٹولز اور انفراسٹرکچر کے حوالے سے تعاون کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک ہمیشہ سے اپنے تعاون کو مستحکم کرنا چاہتے ہیں اور نئی راہیں کھولنا چاہتے ہیں جس سے دونوں ملکوں کے عوام کو فائدہ ہوگا۔ عوامی تعلقات چینی وزیرخارجہ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں 220,000 سے زیادہ چینی شہری مقیم ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ 2019 میں چین کے تقریباََ20 لاکھ سیاحوں نے متحدہ عرب امارات کی سیر کی۔ انہوں نے کہا کہ عوامی رابطے دونوں ممالک کے مابین دوستی کا پل بن چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وباء پر قابو پانے کیلئے احتیاطی تدابیر پر عملدرآمد جاری ہے اور ہمیں یقین ہے جیسے جیسے دبئی ایکسپو قریب آرہا ہے متحدہ عرب امارات چینی سیاحوں کے لئے ایک اہم منزل ثابت ہوگا۔ ترجمہ: ریاض خان ۔ http://wam.ae/en/details/1395302921907

WAM/Urdu