بدھ 12 مئی 2021 - 12:48:30 شام

محمد بن راشد نے "100ملین کھانے" کی مہم کاآغاز کیا


دبئی، 11 اپریل، 2021 (وام) ۔۔ نائب صدر، وزیر اعظم اور دبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد آل مکتوم نے رمضان المبارک کے مقدس مہینے کے دوران 20 ممالک میں ضرورتمند افراد کو کھانے کے پارسل مہیا کرنے کے لئے "100 ملین کھانے" کی مہم کا آغاز کیا ہے۔ یہ مہم گزشتہ سال مقامی طور پر منعقد ہونے والی "10 ملین کھانوں" کی مہم کو توسیع دے کر شروع کی گئی ہے ۔ اس مہم کے تحت مشرق وسطیٰ، افریقہ اور ایشیاء کے کمزوروں طبقوں کو غذائی مدد فراہم کی جائے گی۔ متحدہ عرب امارات کے اندر اور باہر تاجروں، کمپنیوں اور عوام کو دعوت دی گئی ہے کہ وہ اس مہم کے لئے مالی اعانت دیں جو سوڈان ، لبنان ، اردن ، پاکستان ، انگولا ، یوگنڈا اور مصر سمیت ممالک میں کھانے کے پارسل تقسیم کرے گی۔ کم از کم ایک درہم کے ذریعے ان ممالک میں ایک فرد کو کھانا فراہم کیا جاسکتا ہے۔ محمد بن راشد آل مکتوم گلوبل انیشی ایٹو (MBRGI) فوڈ بینکنگ ریجنل نیٹ ورک اور فائدہ اٹھانے والے ممالک میں مقامی فلاحی تنظیموں کے ساتھ تعاون کرے گا تاکہ فوڈ پارسل کو کمزور افراد اور خاندانوں کی دہلیز تک پہنچایا جاسکے۔ شیخ محمد بن راشد آل مکتوم نے کہا کہ رمضان کے مقدس مہینے کے دوران کھانا فراہم کرنا ہم متحدہ عرب امارات سے انسانیت کو سب سے بہتر طور پر دے سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کوویڈ 19 وباء نے ایک بڑی آبادی کو معاشی مشکل کی طرف دھکیل دیا ہے اس لئے ہمیں مزید رحم دلی اور ہمدردی کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔ عوام کو اس مہم میں کردار ادا کرنے کی ترغیب دیتے ہوئے شیخ محمد نے کہا کہ ہم انسانیت پسند تنظیموں ، کمپنیوں ، اداروں اور انسانی ہمدردی رکھنے والوں کے ساتھ مل کر کام کریں گے تاکہ وہ دنیا بھر میں مشکلات کے شکار افراد اور خاندانوں کو سلامتی کا احساس دلانے کے لئے 100 ملین کھانوں کی فراہمی کی مہم میں ہمارا ساتھ دیں۔ شیخ محمد بن راشد المکتوم نے کہا کہ یہ مہم متحدہ عرب امارات کے فلسفے کا لازمی جزو ہے۔ انھوں نے عالمی بھوک سے نمٹنے کے لئے کوششوں کو متحد کرنے اور ضروری وسائل کو بروئے کار لانے کی ضرورت پر زور دیا۔ انھو ں نے کہا کہ ہم سے چار گھنٹے کے فاصلے پر 52 ملین افراد بھوک افلاس کا شکار ہیں۔ ہمیں ان طبقات کو بااختیار بنانے کے لئے فوری کارروائی کرنے کی ضرورت ہے۔ شیخ محمد بن راشد المکتوم نے کہا کہ آج ہمارے پاس موقع ہے کہ متحدہ عرب امارات سے دنیا کے 20 ممالک میں 100 ملین امن کے پیغامات بھیجیں۔ یہ مہم متحدہ عرب امارات کی طرف سے عالمی سطح پر بھوک سے نمٹنے کے لئے عالمی سطح پر کی جانے والی کوششوں کا ایک حصہ ہے۔ یہ ایک بہت بڑا چیلنج ہے جو COVID-19 کے پھیلنے سے بڑھ گیا ہے اور اس نے لاکھوں پسماندہ آبادی کو زیادہ سے زیادہ عدم تحفظ ، غربت اور بے روزگاری کی طرف دھکیل دیا ہے۔ اس مہم کا مقصد 2030 تک بھوک ختم کرنے کے لئے اقوام متحدہ کے 17 پائیدار ترقیاتی اہداف میں سے دوسرے کے حصول میں بین الاقوامی برادری کی مدد کرنا ہے۔ ایم بی آر جی آئی اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام ، فوڈ بینکنگ ریجنل نیٹ ورک ، مستفید ممالک میں انسانیت پسند اور خیراتی تنظیموں ، محمد بن راشد المکتوم ہیومینٹیرین اینڈ چیریٹی اسٹیبلشمنٹ (ایم بی آر سی ایچ) اور متحدہ عرب امارات کی وفاقی اور مقامی اداروں کے ساتھ مل کر یہ مہم چلائے گی۔ دنیا بھر سے کمپنیاں اور کاروباری افراد www.100millionmeals.ae کے ذریعے یا IBAN نمبر:AE080240001520977815201 کے ساتھ دبئی اسلامک بینک کے اکاؤنٹ میں ایک درہم سے شروع ہونے والی کوئی بھی رقم عطیہ کرسکتے ہیں۔ بڑے عطیات اس مہم کے کال سینٹر کو ٹول فری نمبر 8004999 کے توسط سے دیئے جاسکتے ہیں۔ اس مہم کا مقصد یکجہتی اور انفرادی اور کارپوریٹ ذمہ داری کو فروغ دینا ہے جس سے معاشرے کے تمام طبقات کو اپنے طرز زندگی کا لازمی جزو کے طور پر انسان دوستی کو اپنانے کی ترغیب دی جائے گی۔ یہ متحدہ عرب امارات کے انسان دوست اصولوں اور کمزور لوگوں کی مدد کرنے کے عزم کا اظہار ہے۔ متحدہ عرب امارات نے بھوک اور غذائی قلت کے خاتمے کے لئے بڑے وسائل وقف کیے ہیں اور ورلڈ فوڈ پروگرام میں دنیا کا پانچواں سب سے بڑا ڈونر قرار دیا گیا ہے۔ ترجمہ: ریاض خان ۔ http://wam.ae/en/details/1395302926229

WAM/Urdu